logo

ای پیپر

اوپینین پول

کیا اترپردیش اسمبلی انتخابات کے نتائج نے مسلم ووٹ کو بے وقعت ثابت کردیا ؟

ہاں
نہیں

نئی دہلی،11جنوری(یواین آئی)سپریم کورٹ 2005 کے سہراب الدین شیخ مڈبھیڑ معاملے کے ٹرائل جج بی ایچ لویا کی موت کے معاملے کی آزادانہ تفتیش سے متعلق عرضی کی سماعت جمعہ کوکرے گی۔مہاراشٹر کے نامہ نگار بندھو راج سنبھالی لونے کی عرضی پر وکیل انیتا شنائے نے چیف جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی بینچ کے سامنے معاملے کا خصوصی طورپر ذکر کیا۔انہوں نے کہا کہ یہ معاملے بے حد اہم ہے اس لئے اس کی سماعت جلد از جلد کرائی جانی چاہئے۔جسٹس مشرا نے ان کی دلیلیں قبول کرتے ہوئے معاملے کی سماعت کےلئے جمعہ کی تاریخ مقرر کی۔اس سے پہلے پنجاب اور ہریانہ ہائی کورٹ بار اسوسی ایشن کے 470اراکین نے چیف جسٹس کو خط لکھ کر سہراب الدین معاملے کی ذیلی عدالت میں سماعت کرنے والے سابق جج بی ایچ لویا کی موت کی جانچ کا مطالبہ کیاتھا۔یہ خط سپریم کورٹ کے ججوں او ر ممبئی ہائی کورٹ کے کارگزار چیف جسٹس کو بھی بھیجے گئے ہیں۔بار ایسو سی ایشن نے مسٹر لویا کی مشتبہ موت کی جانچ مرکزی جانچ بیورو یا خصوصی جانچ ٹیم سے کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔قابل ذکر ہے کہ ابھی تک اس معاملے کے سلسلے میں ایک مجرم رٹ عرضی ممبئی ہائی کورٹ کی ناگ پور بینچ میں داخل کی گئی ہے،جبکہ سابق بحریہ چیف ایڈمیرل ایل رام داس نے بھی چیف جسٹس کو خط لکھ کر معاملے کی عدالتی جانچ کا مطالبہ کیا ہے۔سہراب الدین شیخ اور اس کی بیوی کوثر بی کے مبینہ فرضی مڈبھیڑ میں ہوئے قتل سے متعلق معاملے کو 2012 میں سپریم کورٹ کے حکم پر مہاراشٹر منتقل کردیاگیا تھا۔مسٹر لویا نے اس معاملے کی سماعت کی تھی۔ان کی موت نومبر 2014 میں ہوگئی تھی۔

اس پوسٹ کے لئے کوئی تبصرہ نہیں ہے.
تبصرہ کیجئے
نام:
ای میل:
تبصرہ:
بتایا گیا کوڈ داخل کرے:


Can't read the image? click here to refresh