logo

ای پیپر

اوپینین پول

کیا اترپردیش اسمبلی انتخابات کے نتائج نے مسلم ووٹ کو بے وقعت ثابت کردیا ؟

ہاں
نہیں

قرض میں بے ایمانی اور ٹال مٹول کی وجہ سے آج بہت سے  لوگ ایک دوسرے کو قرض دینے سے انکار کرتے ہیں مگر ایماندار وں کی بھی کسی زمانے میں کمی نہیں رہی ہے وہ بے ایمانی اور ٹال مٹول کی پرواہ کئے بغیر ضرورتمندوں کو قرض دیتے رہے ہیں۔ یہ مومن کی ایک اچھی صفت ہے۔ ہم میں سے جسے بھی اللہ نے ضرورت سے زائد مال دیا ہے اس سے ضرورتمندوں کی مدد کرے۔ زکوۃ وخیرا ت تو اپنی جگہ ہے ہی ، سماج میں بہت سے ایسے افراد ہیں جو فقراء ومساکین میں شمار نہیں ہوتے ، وہ محنت کرکے کھاسکتے ہیں ایسے لوگ اگر تجارت یا ضرورت کے تحت مالداروں سے قرض مانگے تو قرض دینا چاہئے۔ اگر قرض دینے میں اطمينان قلب چاہئے تو ضمانت کے طور پر کچھ رکھ لے یا کسی بھروسے مندآدمی کو گواہ بنالے۔ اس مضمون میں آپ کو ایک سائلہ کا جواب بیان کررہاہوں جو پچاس سال پہلے لئے گئے قرض کی واپسی کا طریقہ پوچھ رہی ہیں۔ سائلہ نے پوچھا ہے کہ” آج سے پچاس سال پہلے ایک فوت شدہ انسان نے کسی سے ساڑھے آٹھ  ہزار روپے کی رقم ادھار لی تھی اب اس کے لواحقین اس کا قرض اتارنا چاہتے ہیں اور ان کا سوال یہ ہے کہ آج سے پچاس سال پہلے اس رقم کی ویلیو یقیناً کم تھی اور آج کے دور میں اس رقم کی ویلیو بڑھ چکی ہے تو کیا قرض اتنا ہی ادا کرنا ہے جتنی رقم تھی یا پھر زمانے کی ویلیو کے مطابق ادا کرنا ہوگا؟” اس سوال میں کئی پہلو ہیں ان سب کا جواب جاننا یہاں ضروری ہے۔ (1)پہلی بات یہ ہے کہ قرض لینے والا جس قدر ہوجلدی سے جلدی قرض واپس کردے۔ موت کا وقت کسی کومعلوم نہیں ممکن ہے قرض کی واپسی کئے بغیر دنیا سے رخصت ہوجائے اور اس کے ذمہ یہ قرض رہ جائے ، اس صورت میں یوم حساب اس میت کی  نیکی (قرض کے برابر)لے کر قرض دینے کو دے دی جائے گی اور یہ بھی جالیں کہ جان بوجھ کرقرض میں ٹال مٹول کرنے والا ظالم ہے ،اگر بروقت قرض کی واپسی میں دشواری ہورہی ہوتو قرض دینے والے سے مہلت طلب کرے۔ قرض دینے والے کو بھی مقروض کے حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے مہلت اور عفو سے کام لینا چاہئے۔ (2)دوسری بات یہ ہے کہ جس کسی نے قرض لیا ہو اس کی وفات پہ سب سے پہلے قرض کی ادائیگی ہونی چاہئے ، نبی ﷺ نماز جنازہ پڑھانے سے پہلے پوچھتے کہ کیا اس پہ کوئی قرض ہے ؟ کیا اس نے ترکہ چھوڑا ہے ؟ قرض ہوتا توترکہ سے  پہلے قرض کی ادائیگی کا حکم دیتے ، ایک شخص کا جنازہ لایا گیا اس کے ذمہ قرض تھامگر ترکہ میں کچھ نہیں چھوڑا تھا آپ ﷺنے اس کی نماز جنازہ پڑھانے سے انکار کردیا جب ایک صحابی نے اپنے ذمہ قرض کی ادائیگی لے لی تو آپ نے جنازہ پڑھایا۔ سلمہ بن اکوع رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں : ثُمَّ أُتِيَ بِالثَّالِثَةِ فَقَالُوا صَلِّ عَلَيْهَا قَالَ هَلْ تَرَكَ شَيْئًا قَالُوا لَا قَالَ فَهَلْ عَلَيْهِ دَيْنٌ قَالُوا ثَلَاثَةُ دَنَانِيرَ قَالَ صَلُّوا عَلَى صَاحِبِكُمْ قَالَ أَبُو قَتَادَةَ صَلِّ عَلَيْهِ يَا رَسُولَ اللَّهِ وَعَلَيَّ دَيْنُهُ فَصَلَّى عَلَيْهِ(صحیح البخاری: 2289) ترجمہ: پھر تیسرا جنازہ لایا گیا۔ لوگو ں نے آپ کی خدمت میں عرض کیا کہ اس کی نماز پڑھا دیجئے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے متعلق بھی وہی دریافت فرمایا، کیا کوئی مال ترکہ چھوڑا ہے؟ لوگو ں نے کہا کہ نہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے دریافت فرمایا، اور اس پر کسی کا قرض بھی ہے؟ لوگوں نے کہا کہ ہاں تین دینار ہیں۔ آپ نے اس پر فرمایا کہ پھر اپنے ساتھی کی تم ہی لوگ نماز پڑھ لو۔ ابوقتادۃ رضی اللہ عنہ بولےاے اللہ کے رسول ! ان کی نماز پڑھا دیجئے، ان کا قرض میں ادا کردوں گا۔ تب آپ نے اس پر نماز پڑھائی۔ صورت مسئولہ میں میت کی تدفین سے قبل ہی قرض کی ادائیگی کا اعلان ہوجانا چاہئے تھا ، اگر اس وقت لواحقین میں سے کسی کو قرض کا علم نہیں تھا تو اللہ معاف کرنے والا ہے لیکن علم ہوتے ہوئے بھی تاخیر کی گئی تو قرض دینے والے سے میت کے حق میں معافی طلب کرے۔ (3)تیسری بات یہ ہے کہ قرض کی صورت میں جتنا پیسہ لیا ہے وہی لوٹا نا چاہئے ، پیسے کی ویلیو زمانہ طویل ہونے سے  زیادہ نہیں ہوتی بلکہ کم ہوتی جارہی ہے مثلا پہلے سوروپئے میں ایک گائے خرید لیتے تھے تو اب ایک گائے کے لئے آٹھ دس ہزار روپئے چاہئے۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ  پیسے کی ویلیو دن بدن زیادہ نہیں کم ہورہی ہے۔ ہاں یہ کہہ سکتے ہیں کہ پیسے کی ویلیو کم ہونے سے قرض دار نے جتنی رقم قرض لیا تھا اس میں اپنے زمانے کے حساب سے زیادہ سامان خرید سکتا تھا جبکہ آج پچاس سال بعد وہ پیسہ قرض دینے والے کو لوٹانے سے کم سامان خرید سکتا ہے۔ اس صورت میں قرض دینے والا کا نقصان  ہورہاہے۔ قرض دینے کا احسان اور تاخیر سے قرض  لوٹانے پر نقصان کا اجر اللہ کے پاس ہے۔ ایک مدت کے بعد ہوبہو قرض لوٹانے سے متعلق بخاری شریف میں نبی اسرائیل کا واقعہ مذکور ہے جس کا مفہوم بیان کرتا ہوں۔ نبی ﷺ بیان کرتے ہیں کہ نبی اسرائیل کے ایک آدمی نے نبی اسرائیل کے دوسرے آدمی سے ایک ہزار دینار قرض مانگا ، اس قرض پہ قرض مانگنے والے نے اللہ کو گواہ بھی اور ضامن بھی بنایا۔ قرض ایک مدت کے لئے طے کرکے قرض دار دریائی سفر پہ نکل  گیا جب ضرورت پوری ہوگئی تودریائی  سفر سے واپسی کے لئے کشتی وغیرہ تلاش کیا تاکہ متعین وقت پہ قرض لوٹا سکے مگر سواری کا انتظام نہ سکا۔ اس نے ایک لکڑی میں سوراخ کرکے ایک ہزار دینار اور ایک خط اس میں ڈال کر دریا کے حوالے کرتے ہوئے کہا کہ اے اللہ ! تو خوب جانتا ہے کہ میں نے فلاں شخص سے ایک ہزار دینار قرض لیا تھا۔ اس نے مجھ سے ضامن مانگا تو میں نے کہہ دیا تھا کہ میرا ضامن اللہ تعالیٰ کافی ہے اور وہ بھی تجھ پر راضی ہوا۔ اس نے مجھ سے گواہ مانگا تو اس کا بھی جواب میں نے یہی دیا کہ اللہ پاک گواہ کافی ہے تو وہ مجھ پر راضی ہو گیا اور  تو جانتا ہے کہ  میں نے بہت کوشش کی کہ کوئی سواری ملے جس کے ذریعہ میں اس کا قرض اس تک مدت مقررہ میں پہنچا سکوں لیکن مجھے اس میں کامیابی نہیں ہوئی اس لیے اب میں اس کو تیرے ہی حوالے کرتا ہوں۔ قرض دینے والا دریا کنارے آیا کہ شاید کوئی جہاز آئے اور قرض لینے والا مجھے میرا پیسہ لوٹا دے۔ اسے کوئی جہاز تو نہیں ملا مگر ایک لکڑی ملی جس میں دینار اور ایک خط تھا۔ ادھر قرض دار برابر اس کوشش میں تھا مجھے کسی طرح شہر جانے کا موقع ملے کہ قرض لوٹا سکوں ، بہت دن بعد اسے شہر لوٹنے کا موقع مل گیا۔ جب اس آدمی سے ملاقات ہوئی تو قرض دینے والے نےپوچھاکہ اچھا یہ تو بتاؤ  کوئی چیز کبھی تم نے میرے نام بھیجی تھی؟ مقروض نے جواب دیا بتا تو رہا ہوں آپ کو کہ کوئی جہاز مجھے اس جہاز سے پہلے نہیں ملا جس سے میں آج پہنچا ہوں۔ اس پر قرض خواہ نے کہا کہ پھر اللہ نے بھی آپ کا وہ قرض ادا کر دیا جسے آپ نے لکڑی میں ڈال کر بھیجا تھا چنانچہ وہ صاحب اپنا ہزار دینار لے کر خوش خوش واپس لوٹ گئے۔(صحیح البخاری: 2291) اگر ایسے قرض دار ہوں تو کسی کو قرض دینے میں کوئی حرج محسوس نہ ہو۔ (4)چوتھی بات یہ ہے کہ قرض وہی آدمی دیتا ہے جس کے پاس ضرورت سے زیادہ مال ہو ایسے  آدمی مقروض پر احسان کرتا ہے، اس کا صلہ اللہ کے یہاں بہتر سے بہترہے لہذا کچھ دنوں یا کچھ سالوں میں  ہوبہوقرض کی واپسی پہ قرض کی ویلیو کم ہوجانے سے مایوس نہیں چاہئے ، قرض دینے کا صلہ اللہ کے یہاں ملے گا۔ ان شاء اللہ نبی ﷺ نے فرمان ہے: دخل رجلٌ الجنَّةَ ، فرأى مكتوبًا على بابها : الصدقةُ بعشر أمثالِها ، والقرضُ بثمانيةَ عشرَ(صحيح الترغيب:900) ترجمہ: ایک آدمی جنت میں داخل ہوا ، اس نے جنت کے دروازے پر لکھا دیکھا کہ صدقہ کا بدلہ دس گنا اور قرض کا بدلہ اٹھارہ گنا ہے۔  (5)پانچویں بات یہ ہے کہ اگر قرض لینے والے نے قرض کا مال تجارت میں لگایا اور اس سے نفع کمایا تو مناسب ہے کہ اس نفع سے کچھ نہ کچھ قرض دینے والے کو بھی دے جبکہ قرض کی واپسی میں کافی تاخیر بھی ہوئی اور قرض خواہ نے تنگ نہیں کیا ہو۔ یہ قرض پہ تھوڑا زائد دینا بلامشروط اور غیرضروری ہے ،نہیں دینا چاہے تو کوئی جبر نہیں۔ اس کے لئے میں تین دلائل پیش کرتا ہوں۔ پہلی دلیل : قرض دینے والے کو بلامشروط(پہلے سے زیادہ دینے کی شرط نہ لگی ہو) قرض سے کچھ زیادہ مال لوٹاسکتے ہیں ، یہ کچھ زیادہ دیناضروری نہیں ہے تاہم جائز ہے اس کی دلیل بخاری شریف کی یہ حدیث ہے۔ جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے وہ بیان کرتے ہیں : أتَيتُ النبيَّ صلَّى اللهُ عليه وسلَّم وهو في المسجدِ ، قال مِسعَرٌ : أُراه قال : ضُحًى ، فقال : صلِّ ركعتَينِ .

وكان لي عليه دَينٌ ، فقَضاني وزادَني .( صحيح البخاري:443) ترجمہ: میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا, آپ اس وقت مسجد میں تشریف فرما تھے۔ مسعر نے کہا میرا خیال ہے کہ محارب نے چاشت کا وقت بتایا تھا۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ( پہلے ) دو رکعت نماز پڑھ اور میرا نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر کچھ قرض تھا جسے آپ نے ادا کیا اورکچھ زیادہ  دیا۔ دوسری دلیل : تین غار والوں کا واقعہ ہے جس میں تیسرا شخص ایک آدمی کی مزدوری واپس نہیں کرپاتا اور وہ اس مزدوری سے کاروبار کرتا ہے جب کچھ دنوں بعد مزدور واپس آکر اپنی اجرت کا مطالبہ کرتا ہے تواس نے اجرت سے منافع شدہ تمام مال لوٹادیا۔ بخاری شریف کی اس لمبی حدیث کا یہ ٹکڑا دیکھیں : وقال الثالثُ : اللهمَّ إني استأجَرتُ أُجَراءَ فأعطيتُهم أجرَهم غيرَ رجلٍ واحدٍ ترَك الذي له وذهَب ، فثمَّرتُ أجرَه حتى كثُرَتْ منه الأموالُ ، فجاءني بعد حينٍ ، فقال : يا عبدَ اللهِ أَدِّ إليَّ أجري ، فقلتُ له : كلُّ ما تَرى من أجرِك ، منَ الإبلِ والبقرِ والغنمِ والرقيقِ ، فقال : يا عبدَ اللهِ لا تَستَهزِئْ بي ، فقلتُ : إني لا أستَهزِئُ بك ، فأخَذه كلَّه فاستاقَه فلم يترُكْ منه شيئًا (صحيح البخاري:2272) ترجمہ: اور تیسرے شخص نے دعا کی۔ اے اللہ ! میں نے چند مزدور کئے تھے۔ پھر سب کو ان کی مزدوری پوری دے دی، مگر ایک مزدور ایسا نکلا کہ وہ اپنی مزدوری ہی چھوڑ گیا۔ میں نے اس کی مزدوری کو کاروبار میں لگا دیا اور بہت کچھ نفع حاصل ہو گیا پھر کچھ دنوں کے بعد وہی مزدور میرے پا س آیا اور کہنے لگا اللہ کے بندے ! مجھے میری مزدوری دے دے، میں نے کہا یہ جو کچھ تو دیکھ رہا ہے۔ اونٹ، گائے، بکری اور غلام یہ سب تمہاری مزدوری ہی ہے۔ وہ کہنے لگا اللہ کے بندے ! مجھ سے مذاق نہ کر۔ میں نے کہا میں مذاق نہیں کرتا، چنانچہ اس شخص نے سب کچھ لیا اور اپنے ساتھ لے گیا۔ ایک چیز بھی اس میں سے باقی نہیں چھوڑی۔ یہ مال قرض کا نہیں تھابلکہ اجرت بطور امانت تھی اس امانت سے جو منافع ہوا سب مال والا لے گیا ، یہ بھلائی کا بڑا معیار ہے۔ اس واقعہ سے مال والے کو  زیادہ دینے کا پہلونکلتا ہے۔ تیسری دلیل : قرض دینا ایک احسان ہے اور قرض کی ادائیگی میں تاخیر ہوجائے اور قرض خواہ تنگ نہ کرے تو یہ بڑا احسان ہے اس احسان کا بدلہ دینا چاہئے۔ نبی ﷺ کا فرمان ہے : مَنِ استعاذَ باللَّهِ فأعيذوهُ ومن سألَ باللَّهِ فأعطوهُ ومَن دَعاكم فأجيبوهُ ومن صنعَ إليكُم معروفًا فَكافئوهُ فإن لم تجِدوا ما تُكافئونَه فادعوا لَه حتَّى تَروا أنَّكُم قد كافأتُموهُ(صحيح أبي داود:1672) ترجمہ: جو شخص اللہ کے واسطے سے پناہ مانگے اس کو امان دو اور جو شخص اللہ کے نام سے سوال کرے اس کو دو اور جو تمہاری دعوت کرے اس کی دعوت قبول کرو اور جو تمہارے ساتھ احسان کرے اس کا بدلہ دو۔ اگر بدلہ دینے کے لیے کوئی چیز نہ پاؤ تو اس کے حق میں دعا کرو یہاں تک کہ تم سمجھ لو کہ اس ( کے احسان ) کا بدلہ دے دیا ہے۔ اللہ تعالی ہم سب کو حقوق العباد ادا کرنے اور حقداروں کو زائد مال میں سے خرچ کرنے کی توفیق دے۔ آمین

اس پوسٹ کے لئے کوئی تبصرہ نہیں ہے.
تبصرہ کیجئے
نام:
ای میل:
تبصرہ:
بتایا گیا کوڈ داخل کرے:


Can't read the image? click here to refresh